طوبے میں جو سب سے اُونچی نازُک سیدھی نکلی شاخ

مانگوں نعت نبی لکھنے کو روحِ قُدس سے ایسی شاخ

 

مولیٰ گُلْبُن، رحمت زہر ا،سِبْطَیناس کی کلیاں پُھول

صدّیق وفاروق و عثماں ، حیدر ہر اِک اُس کی شاخ

 

شاخِ قامت شہ میں زلف و چشم و رخسار و لب ہیں

سُنْبُل، نرگس، گُل، پنکھڑیاں قُدرت کی کیا پھولی شاخ

 

اپنے اِن باغوں کا صدقہ وہ رحمت کا پانی دے

جس سے نخلِ دل میں ہو پیدا پیارے تیری وِلا کی شاخ

 

یادِ رُخ میں آہیں کر کے بن میں میں رویا آئی بہار

جُھومیں نسیمیں ،نیساں برسا، کلیاں چٹکیں ، مہکی شاخ

 

ظاہر و باطن اَوّل و آخر زیب فروع و زَین اُصول

باغِ رسالت میں ہے تُو ہی گل،غنچہ، جڑ،پتّی شاخ

 

آلِ احمد خُذْ بیَدِیْ یا سَیّد حمزہ کن مَددی

وقت خزانِ عمر رضا ہو برگِ ہدیٰ سے نہ عارِی شاخ