تابِ مرآتِ سحر گردِ بیابانِ عرب

غازۂ رُوئے قمر دُودِ چراغانِ عرب

 

اللہ اللہ بہارِ چَمَنِستانِ عرب

پاک ہیں لوثِ خزاں سے گل و رَیحانِ عرب

 

جوشِش اَبر سے خونِ ُگلِ فردوس کرے

چھیڑ دے رَگ کو اگر خارِ بیابانِ عرب

 

تشنۂ نہرِ جناں ہ عربی و عجمی

لب ہرنہرِ جناں تشنۂ نیسانِ عرب

 

طوقِ غم آپ ہوائے پرِ قُمری سے گرے

اگر آزاد کرے سروِ خرامانِ عرب

 

مہر میزاں میں چھپا ہو تو حمل میں چمکے

ڈالے اِک بُوند شبِ دَے میں جو بارانِ عرب

 

عرش سے مژدۂ بلقیسِ شفاعت لایا

طائر سِدْرَہ نشیں مرغِ سلیمانِ عرب

 

حُسنِ یوسُف پہ کٹیں مِصْر میں اَنگُشتِ زَناں

سَر کٹاتے ہیں تِرے نام پہ مردانِ عرب

 

کوچہ کوچہ میں مہکتی ہے یہاں بوئے قمیص

یوسُفِستاں ہے ہر اِک گوشۂ کنعانِ عرب

 

بزمِ قدسی میں ہے یادِ لب جاں بخش حضور

عالمِ نور میں ہے چشمۂ حیوانِ عرب

 

پائے جبریل نے سرکار سے کیا کیا القاب

خُسرو خَیلِ ملک، خادمِ سلطانِ عرب

 

بلبل و نیلپر و کبک بنو پروانو!

مہ و خورشید پہ ہنستے ہیں چراغانِ عرب

 

حُور سے کیا کہیں موسیٰ سے مگر عرض کریں

کہ ہے خود حُسنِ اَزَل طالب جانانِ عرب

 

کرمِ نعت کے نزدیک تو کچھ دُور نہیں

کہ رضائے عجمی ہو سگِ حسّانِ عرب