رونقِ بزمِ جہاں ہیں عاشقانِ سوختہ

کہہ رہی ہے شمع کی گویا زبانِ سوختہ

 

جس کو قرصِ مہر سمجھا ہے جہاں اے مُنعمو!

اُن کے خوانِ جُود سے ہے ایک نانِ سوختہ

 

ماہِ من یہ نیّرِ محشر کی گرمی تابکے

آتشِ عصیاں میں خود جلتی ہے جانِ سوختہ

 

برقِ انگشتِ نبی چمکی تھی اس پر ایک بار

آج تک ہے سینۂ مہ میں نشانِ سوختہ

 

مہر عالم تاب جھکتا ہے پئے تسلیم روز

پیشِ ذرّاتِ مزارِ بیدلانِ سوختہ

 

کُوچۂ گیسوئے جاناں سے چلے ٹھنڈی نسیم

بال و پر افشاں ہوں یاربّ بلبلانِ سوختہ

 

بہرِ حق اے بحرِ رَحمت اِک نگاہِ لطف بار

تابکے بے آب تڑپیں ماہیانِ سوختہ

 

رُوکش خورشید محشر ہو تمہارے فیض سے

اِک شرارِ سینۂ شیدائیانِ سوختہ

 

آتشِ تردامنی نے دل کیے کیا کیا کباب

خِضْر کی جاں ہو جِلا دو ماہیانِ سوختہ

 

آتشِ گلہائے طیبہ پر جلانے کے لئے

جان کے طالب ہیں پیارے بلبلانِ سوختہ

 

لطفِ برقِ جلوۂ معراج لایا وجد میں

شعلۂ جوالہ ساں ہے آسمانِ سوختہ

 

اے رضا مضمون سوزِ دِل کی رِفعت نے کیrا

اس زمینِ سوختہ کو آسمانِ سوختہ