عِشق مولیٰ میں ہو خوں بار کنارِ دامن

یاخدا جلد کہیں آئے بہارِ دامن

 

بہ چلی آنکھ بھی اشکوں کی طرح دامن پر

کہ نہیں تارِ نظر جز دو سہ تارِ دامن

 

اشک برساؤں چلے کوچۂ جاناں سے نسیم

یاخدا جلد کہِیں نکلے بخارِ دامن

 

دل شدوں کا یہ ہوا دامنِ اطہر پہ ہجوم

بیدل آباد ہوا نام دیارِ دامن

 

مُشک سا زلف شہ و نور فشاں رُوئے حضور

اللہ اللہ حلبِ جیب و تتارِ دامن

 

تجھ سے اے گل میں سِتم دیدۂ دشتِ حرماں

خلش دل کی کہوں یا غمِ خارِ دامن

 

عکس افگن ہے ہلالِ لبِ شہ جیب نہیں

مہر عارض کی شعاعیں ہیں نہ تارِ دامن

 

اشک کہتے ہیں یہ شیدائی کی آنکھیں دھو کر

اے ادب گردِ نظر ہو نہ غبارِ دامن

 

اے رضا آہ وہ بلبل کہ نظر میں جس کی

جلوۂ جیب گل آئے نہ بہَارِ دامن