اے اِمامُ الہدیٰ محب رسول

دین کے مقتدا محب رسول

 

نائب مصطفٰے محب رسول

صاحب اصطفا محب رسول

 

خادِمِ مرتضیٰ محب رسول

مظہر اِرتضا محب رسول

عین حق کا بنا محب رسول

 

عین حق کا بنا محب رسول

زُبدۃُ الاتقیا محب رسول

 

عُمْدَۃُ الازکیا محب رسول

غربا پر فدا محب رسول

 

اُمرا سے جدا محب رسول

اے سَلَف اِقتدا محب رسول

 

اے خَلَف پیشوا محب رسول

سقم دل کی شفا محب رسول

 

چشم دین کی صفا محب رسول

شرقِ شانِ وَفا محب رسول

 

برقِ جانِ جفا محب رسول

اے کرم کی گھٹا محب رسول

 

اپنی بارش بڑھا محب رسول

کیوں نہ ہو چاند سا محب رسول

 

نور کا جَبْہَہ سا محب رسول

حرمین و حمی میں بس کے گیا

 

نَجَف و کربلا محب رسول

تو کلامِ خدا کا حافِظ ہے

تیرا حافِظ خدا محب رسول

 

عبد قادِر نہ کیوں ہو نام کہ ہے

ظل غوثُ الوریٰ محب رسول

 

مشعل راہِ دین و سنت ہے

تیرے رُخ کی ضیا محب رسول

اچھے پیارے کی خانہ زادی ہے

 

اچھا پیارا بنا محب رسول

شرم والے غنی کا بیٹا ہے

کانِ جود و حیا محب رسول

 

آج قائم ہے دَم قدم سے ترے

دین حق کی بنا محب رسول

 

ٹھیک معیار سنیّت ہے آج

تیری حب و وِلا محب رسول

سنیت سے پھرا ہدی سے پھرا اب جو تجھ سے پھرا محب رسول

 

مصطفی کا ہوا خدا کا ہوا

اب جو تیرا ہوا محب رسول

مُذنب بد مذاق را زہر ست

شہد صافِ شما محب رسول

 

عاصی رُوسیاہ دشمن تست

رنگ رُو شد گوا محب رسول

خارزَاروں کے واسطے ہے سموم

گلبنوں کو صبا محب رسول

 

تیرے ماتھے رہا محب رسول

رَفض و تفضیل و نجدیت کا گلا

تیرے ہاتھوں کٹا محب رسول

 

تو نے اَبنائے بد مذاقی کو

پے پدر کر دیا محب رسول

ماتمی ہیں زَنانِ نجد کہ ہائے بیوہ تو نے کیا محب رسول

 

جلتے ہیں ندویہ کہ صدر کی قدر

سرد کی تو نے یا محب رسول

سر مُنڈاتے ہی پڑگئے اَولے

تجھ سے پالا پڑا محب رسول

 

بخت کھل جاتا تخت مل جاتا

تو نے بندی رکھا محب رسول

مَکَرُوْا مَکْرَ ھُمْ و عند اللہ

مَکْرُھُمْ و الجَزا محب رسول

 

کوہ اَفگن تھا ان کا مکر مگر مکرحق تھا بڑا محب رسول پہلے بھی مَکْرْدَارِ ندوَہ کو حق نے دی تھی سزا محب رسول

 

بعد تیرہ صدی کے پھر اُچھلا

اب وہ تجھ سے دَبا محب رسول اُن کی جو رُوئداد تھی کر دی تو نے دَم میں ہبا محب رسول

 

زَر کے مفتی بنا کریں مخطی تو ہے مفتی بجا محب رسول ناظمِ فتنہ لاکھ ہوں تو ہے

ناظمِ اِہتدا محب رسول

 

جھوٹے حقانی بنتے ہیں گمراہ

سچے حقانی آ محب رسول

کچھ مداہن حمیر میر بنے

میر ان کو سنا محب رسول

 

یوں نہ سمجھیں تو سر اڑایا آپ

تو دل اُن کا اُڑا محب رسول

ندوِی جھنجھلاتے ہیں کہ وہی تو ہیں

اَسد اَحْمد رَضا محب رسول

 

غافل اس سے کہ ایک سُنی ہے

فوجِ حق میں ہوں یا محب رسول

گلۂ بز کو ایک شیر بہت

وہ بھی لا سِیَّما محب رسول

 

ہم بجامع رَمَہ رَمَد اَز شیر

لطف دِہ جمعہ رَا محب رسول

میرے ستر70 سوال کا قرضہ

نہ ادا ہو سکا محب رسول

نہ ادا ہو اگرچہ محشر تک

ڈھ